53

​چیئرمین نیب جسٹس(ر) جاوید اقبال نے آج نیب ہیڈ کواٹرز میں پہلی کھلی کچہری کا انعقاد کر کے اپنا وعدہ پور ا کر دیا

(سجاد راجپوت) ​چیئرمین نیب جسٹس(ر) جاوید اقبال نے آج نیب ہیڈ کواٹرز میں پہلی کھلی کچہری کا انعقاد کر کے اپنا وعدہ پور ا کر دیاہے اور ملک بھر سے آنے والے شکایات کنندہ گان کی بد عنوانی سے متعلق شکایات سنیں اور بعض شکایات پر موقع پر ہی قانون کے مطابق احکامات بھی جاری کر دیئے ۔​
تفصیلات کے مطابق قومی احتساب بیورو کے چیئرمین جسٹس جاوید اقبال نے اپنے منصب کی ذمہ داریاں سنبھالنے کے بعد اپنے خطاب میں اس بات کا اعلان کیا تھا کہ وہ ہر ماہ کی آخری جمعرات کو دن 2 بجے سے لے کر 4بجے تک عوام کی بدعنوانی سے متعلق شکایات بذات خود نیب ہیڈکوارٹرز میں سنیں گے۔ اس سلسلہ میں نیب نے تمام شکایات کنندہ گان سے کہا تھا کہ وہ بدعنوانی سے متعلق درخواستیں، ٹھوس شواہد اور قومی شناختی کارڈ کی کاپی کے ہمراہ مقررہ وقت نیب ہیڈکوارٹرز اسلام آباد لے آئیں۔ اپنے وعدہ پر عمل کرتے ہوئے قومی احتساب بیورو کے چیئرمین جسٹس جاوید اقبال نے 26 نومبر 2017 ءکو آخری جمعرات ہونے کے ناطے نیب ہیڈکوارٹرز میں اپنی پہلی کھلی کچہری میں ملک بھر سے آنے آلے شکایات کنندہ گان کی بدعنوانی سے متعلق شکایات انتہائی توجہ اور اطمینان کے ساتھ فرداً فرداً سنیں اور بعض شکایات پر موقع پر ہی👈 قانون کے مطابق ضروری احکامات بھی جاری کئے جس پر تمام شکایات کنندہ گان نے چیئرمین نیب کا شکریہ ادا کیا۔
چیئرمین نیب نے تمام شکایات کنندہ گان کو یقین دلایا کہ وہ ان کی ہر شکایت کو نیب کے قانون کے مطابق دیکھیں گے کیونکہ وہ ”احتساب سب کیلئے“ کی پالیسی پر یقین رکھتے ہیں اور ملک سے بدعنوانی کے خاتمہ ان کی اولین ترجیح ہے جس کیلئے انہوں نے بدعنوان عناص رے عوام کی لوٹی ہوئی رقم برآمد کرکے نہ صرف قومی خزانے میں جمع کروارہے ہیں بلکہ بدعنوان عناصر کے خلاف بلاتفریق احتساب کے عمل پر یقین رکھتے ہیں۔
قومی احتساب بیورو کے چیئرمین جسٹس جاوید اقبال کو ملک بھر سے آئے ہوئے افراد نے اپنی شکایات سے آگاہ کیا جن کو انہوں نے انتہائی توجہا ور تحمل سے سنا۔ اس موقع پر انہوں نے تمام شکایات کنندہ گان سے کہا کہ انہوں نے یہ فیصلہ کیا ہے کہ اب نیب کے تمام ریجنل ڈی جی اپنے ریجنل بیوروز میں ہر ماہ کی آخری جمعرات کو دن 2 بجے سے لے کر 4بجے تک عوام کی بدعنوانی سے متعلق شکایات سنیں گے اور ان پر قانون کے مطابق کارروائی کی جائے گی۔ اس سے عوام کی جائز شکایات کے ازالہ کرنے میں نہ صرف مدد ملے گی بلکہ عوام کے نیب پر اعتماد میں مزید اضافہ ہوگا۔
قومی احتساب بیورو کے چیئرمین جسٹس جاوید اقبال نے نیب کے افسران اور اہلکاروں کو ہدایات کی کہ تمام شکایات کنندہ گان کی تمام شکایات کو کمپیوٹرائز کرنے کے علاوہ ان کی شکایات کو قانون کے مطابق منطقی انجام تک پہنچائیں اور تمام شکایات کنددہ گان اور دیگر افراد جو نیب میں اپنی شکایات لے کر آتے ہیں ان کےس اتھ خوش اخلاقی کے شاتھ پیش آیا جائے اور ان کی عزت نفس کا ہمیشہ خیال رکھا جائے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں