54

آئی فون کچھ عرصے بعد سلو کیوں ہوجاتے ہیں؟ کمپنی نے خود ہی اعتراف جرم کرلیا

سان فرانسسکو(نیوز ڈیسک) جب بھی آئی فون کا نیا ماڈل مارکیٹ میں آتا ہے تو اس کے ساتھ ہی پرانے ماڈل کے مالکان یہ سوال پوچھتے نظر آتے ہیں ”میرا آئی فون سست کیوں ہو گیا ہے؟“ یہ معمہ آئی فون بنانے والی کمپنی ایپل نے ایک حیران کن اعتراف کر کے خود ہی حل کر دیا ہے۔ ایپل نے پہلی بار یہ اعتراف کرلیا ہے کہ پرانے آئی فونز کی کارکردگی کو کمپنی خود ہی سست کردیتی ہے تاکہ یہ پرانی اور کمزور بیٹری کی وجہ سے شٹ ڈاﺅن نا ہوں۔
میل آن لائن کے مطابق ٹیکنالوجی ماہرین ایک عرصے سے یہ بات کہتے رہے ہیں کہ ایپل آئی فون کی بیٹری جیسے جیسے کمزور ہوتی چلی جاتی ہے اس کے پروسیسر کی سپیڈ بھی خود ہی کم ہوتی چلی جاتی ہے۔ پہلی بار کمپنی نے اعتراف کیا ہے کہ اس کا ایک سافٹ ویئر بیٹری پرانی ہونے کی صورت میں پروسیسر کی سپیڈ کو کم کردیتا ہے۔ا گرچہ ایپل کا کہنا ہے کہ اس اقدام کا مقصد کمزور بیٹری کی وجہ سے موبائل فون کو شٹ ڈاﺅن ہونے سے بچانا ہے لیکن کمپنی کو اس بات پر شدید تنقید کا سامنا ہے کہ اس نے یہ بات پہلے کیوں چھپائے رکھی۔ اب یہ تفصیلات سامنے آرہی ہیں کہ جب آئی فون کا پروسیسر اپنی بلند ترین سپیڈ پر کام کررہا ہوتا ہے تو کمزور بیٹری اسے پوری توانائی نہیں دے پاتی جس کی وجہ سے فون شٹ ڈاﺅن ہوجاتا ہے۔ ایپل نے اس مسئلے کا حل یہ نکالا کہ پرانی بیٹری والے آئی فون کے پروسیسر کو ہی سست کردیا جائے۔ صرف پرانی بیٹری ہی نہیں بلکہ بیٹری کی چارجنگ کم ہونے یا درجہ حرارت بہت کم ہونے کی وجہ سے بھی اس کی کارکردگی بہت متاثر ہوتی ہے، جس کے نتیجے میں پروسیسر کی سپیڈ سست کر دی جاتی ہے۔
تنقید کے باوجود ایپل کمپنی اس موقف پر قائم ہے کہ یہ فیچر صارفن کی سہولت کے لئے ہے۔ کمپنی کا کہنا ہے کہ اس کا مقصد آئی فون کی مجموعی کارکردگی کو بہتر بنانا ہے، یعنی اگر بیٹری کسی وجہ سے پوری توانائی فراہم نہ بھی کررہی ہو تو صارف کا فون شٹ ڈاﺅن نا ہو۔ کمپنی کا مزید کہنا ہے کہ نئے آئی فونز میں بھی یہ فیچر متعارف کروایا جارہا ہے

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں