24

ناروے اسلامک سینٹر پر حملہ پاک فضائیہ کے ریٹائرڈ اہلکار اور پاکستانی شہری نے ناکام بنا دیا

اوسلو (ویب ڈیسک)  ناروے میں اوسلو کے قریب اسلامک سینٹر پر حملے کی کوشش 65 سالہ پاکستانی شہری محمد رفیق نے ناکام بنادی اور مشتبہ حملہ آور کو اسلحہ سمیت دبوچ لیا، اس حملے  کی تحقیقات ممکنہ دہشت گردی کی کارروائی کے طور پرکی جا رہی ہے۔

عرب میڈیا کے مطابق محمد رفیق  نے بتایا کہ حملہ آور کے پاس گن اور پستول تھا اور اس سے سنٹر کے مرکزی دروازے کی بجائے چھوٹے دروازے سے اندر داخل ہو کر فائرنگ کردی۔ اردونیوز کے مطابق گلوبل نیوز کو دیئے گئے انٹرویو میں محمد رفیق نے بتایا کہ اڑھائی سال سے ناروے میں مقیم ہوں، موقع پرموجود ایک اور شخص محمد اقبال کی مدد سے حملہ آور کو چھلانگ لگا کر دبوچ لیا اور کہنی مار کر اس کی گن اور پستول دور پھینک دئیے، حملہ آور نے میری آنکھ میں اپنی انگلی گھسا ا ور بازو موڑنے کی وجہ سے آنکھ زخمی اور بازو سوج گیا۔ایک سوال کے جواب میںمحمد رفیق کا کہنا تھا کہ فائرنگ کی آواز سنی تھی ،یہ نہیں معلوم کہ مسلح شحض نے مجھ پر بھی گولی چلائی تھی یا نہیں اگر گولی لگ جاتی تو پتہ چلتا ۔ادھر رائٹرز کے حوالے سے بتایا گیا کہ بیرم اسلامک سینٹر کے ترجمان محمد وحید نے موقف اپنایا کہ حملے کے وقت مسجد میں 3 افراد موجود تھے جو عیدالاضحی کے اجتماع کی تیاری کر رہے تھے۔

پولیس کا کہنا ہے جائے وقوعہ سے2آتشی ہتھیار ملے ہیں تاہم اس کی نوعیت کے بارے میں کچھ نہیں بتایا گیا،مشتبہ حملہ آور سفید فام مقامی باشندہ ہے تاہم اس کی شناخت ظاہر نہیں کی گئی ۔ مشتبہ شخص تحویل میں ہے اور اس کا نفسیاتی معائنہ کیا جا رہا ہے۔ناروے پولیس کے قائم مقام سربراہ رونی اسکجولڈ نے پریس کانفرنس میں کہا کہ ’ ہم اسے دہشت گردی کی کارروائی کے طور پر دیکھ رہے ہیں۔ تحقیقات سے پتہ چلا ہے کہ حملہ آور بائیں بازو سے تعلق رکھتا ہے اور تارکین مخالف ہے،پولیس کے پہنچے سے قبل مشتبہ حملہ آور پر قابو پالیا گیا تھا، ان لوگوں نے بڑی ہمت کا مظاہرہ کیا”۔واضح رہے کہ اسلامک سینٹر پر حملے کی کوشش کے چند گھنٹے بعد پولیس کو مشتبہ شخص کے گھر سے ایک خاتون کی نعش ملی تھی۔ پولیس نے تصدیق کی کہ17سالہ خاتون مشتبہ حملہ آور کی سوتیلی بہن ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں